شنگھائی میں نیا فائنیس دفتر

سانتا کلارا، کیلیفورنیا، 15 جنوری 2015ء/ پی آرنیوزوائر/ ایشیانیٹ پاکستان –

فائنیس سلوشنز نے شنگھائی، چین میں نئے دفتر کے افتتاح کا اعلان کردیا۔

فائنیس سلوشنزنے متحرک چینی مارکیٹ کو خدمات دینے کے لیے شنگھائی میں ایک ماتحت دفتر کھول لیا ہے۔ ہوانگ پو ضلع کے وسط میں واقع یہ دفتر خوبصورت تیپنگ چویو پارک کا خوبصورت طائرانہ منظر پیش کرتا ہے۔

موجودہ اور ممکنہ صارفین دونون کی ضروریات پوری کرنے کے لیے خاص طور پر تیار کردہ یہ تنصیب سیلز اور سروس عملے کے لیے دفاتر، خصوصی پرزوں کا ذخیرہ اور ایک تربیتی مرکز مہیا کرے گی۔

ڈاکٹر باربراپالڈس، سی ایاوفائنیس سلوشنز، نئے دفتر کے بارے میں بہت پرجوش ہیں۔ “گزشتہ سال کے دوران فائنیس نے چین میں اپنے کاروبار کو بڑے پیمانے پر پھیلایا ہے۔ ہمیں یہ اعلان کرتے ہوئے خوشی ہے کہ شنگھائی میں ہمارا نیا سیلز اور سروس مرکز ہمیں صارفین کو مقامی سپورٹ اور تربیت فراہم کرنے کی سہولت دے گا۔”

شنگھائی ایشیائی مارکیٹ میں ایک تزویراتی مرکز گردانا جاتا ہے، کیونکہ یہ سیول، ٹوکیو اور سنگاپور جیسے بایوٹیک توسیع کے بڑے علاقوں کے قریب واقع ہے۔ نئی تنصیب فائنیس عملے کو خطے میں صارفین کی معاونت اور پروسیسنگ کے چیلنجز کے لیے فوری حل تلاش کرنے میں مدد دے گی۔

گرفت، خودکاری اور واحد استعمال کے حل کا فائنیس پورٹ فولیو واحد استعمال کے 3 ایل اسمارٹ ویزلزبرائے آر اینڈ ڈی سے نئے اسمارٹ فیکٹری انٹرپرائز حل تک نئی مصنوعات کے ساتھ مستقل توسیع پاتا ہے۔ شنگھائی میں فائنیس ٹیم کی نظریں صحت عامہ کے نئے حلوں کی تیاری کو بہتر بنانے میں صارفین کی مدد پر مرکوز ہیں۔

فائنیس سلوشنزانکارپوریٹڈ کے بارے میں

فائنیس سلوشنزلچکدارہارڈویئر اور سافٹویئرخودکاریپیش کرتا ہے جو بے مثال کسٹمائزیبل بایوپروسیسنگ کی سہولت دیتا ہے۔ ہم تحقیق کی بنیاد پر ایک سلیکون ویلی کمپنی ہیں جو اپنے صارفین کو جدید واحد استعمال کے سینسرز، بایو ریایکٹرز، کنٹرولرز اور سافٹویئر کے ذریعے تقویت دینے پر یقین رکھتی ہے۔ ہمارے اسمارٹ پارٹسکسی فائنیس سلوشن کی بنیاد ہیں جو بایوفارماسیوٹیکل صنعت کے اندر اور باہر کی ٹیکنالوجیاں استعمال کررہے ہیں۔ اپنی مصنوعات کے علاوہ ہم واحد فراہم کنندہ ہیں جو تکمیلی تجربے کے ساتھ صارفین کو آزادی دیتے ہیں کہ بالائی یا نچلے دھارے سے کلیدی یونٹ آپریشنز کے ترجیحی فراہم کنندہ کی حیثیت سے کسی کا انتخاب کریں۔ چاہے یہ تحقیق اور پیشرفت کے لیے آزادانہ، واحد استعمال کے  بایو ری ایکٹر ہوں یا سی جی ایم پی ساخت گری میں مکمل اسمارٹ فیکٹری، ہمارے پاس اپنے صارفین کے لیے ایک بایوپروسس حل موجود ہے۔

 مزید معلومات کے لیے ملاحظہ کیجیےwww.finesse.com۔

پال جی ایلن کی ایبولا کے خلاف جنگ میں مدد کے لیے مغربی افریقہ میں رابطوں کی صلاحیت کو بہتر بنانے سے وابستگی

– ڈیٹا جمع کرنے اور ایبولا ضروریات میں مدد کے لیے 10,000 اسمارٹ فونز کی فراہمی؛ موجودہ رابطوں میں اضافے کے لیے نیٹ ہوپ کے لیے گرانٹ

سیاٹل، 17 نومبر 2014ء/ پی آرنیوزوائر/ ایشیانیٹ پاکستان — انسان دوست شخصیت پال جی ایلن نے آج اعلان کیا ہے کہ وہ اور پال جی ایلن فیملی فاؤنڈیشن ڈیٹا جمع کرنے اور امداد کی ضروریات کو پہچاننے کے لیے مغربی افریقہ میں 10,000 خاص طور پر پروگرام شدہ اسمارٹ فونز پیش کرے گا۔ مزید برآں، جناب ایلن لائبیریا، گنی اور سیرالیون بھر میں رابطوں کو بہتر بنانے کے لیے نیٹ ہوپ کو گرانٹ فراہم کررہے ہیں۔ یہ منصوبہ ایبولا بحران سے نمٹنے کے لیے جناب ایلن کی 100 ملین ڈالر کی وابستگی کا حصہ ہے۔

اسمارٹ فون فراہمی: اسمارٹ فونز حکومتی کارکنوں اور امدادی رضاکاروں  کے لیے متاثرہ علاقوں میں امدادی کاموں کی موثریت کے بارے میں قابل بھروسہ اعدادوشمار اکٹھا کرنا ممکن بنائیں گے۔ یہ فونز اداروں کی جانب سے تحفےاور ساتھ ساتھ پال جی ایلن فیملی فاؤنڈیشن کی جانب سے خرید کر حاصل کیے گئے تھے۔

اعدادوشمار میدان عمل میں فوری ضروریات کا موثر انداز میں جائزہ لینے اور ان سے نمٹنے کے لیے درست ترین وسائل فراہم کرنے میں حکومتی اور نجی امدادی اداروں کو مدد دینے میں استعمال ہوں گے۔ اقوام متحدہ کا مشن برائے ایبولا ایمرجنسی رسپانس (UNMEER) رابطوں کو ایبولا بحران سے نمٹنے کے لیے سرفہرست ترجیحات میں رکھتا ہے۔ یو این ایم ای ای آر بڑے شہروں میں براڈ بینڈ حل لاگو کرے گا تاکہ سیلولر رابطوں کو پھیلایا جا سکے۔ امدادی کارکن ایبولا صورتحال کے بارے میں معلومات اکٹھی کرکے ہیومنیٹیرین ڈیٹا ایکسچینج کو پیش کرنے کے لیے فونز کا استعمال کریں گے۔

نیٹ ہوپ سپورٹ: نیٹ ہوپ 42 بین الاقوامی این جی اوز کا کنسورشیم ہے؛ جو دیگر کاموں کے ساتھ ساتھ بین الاقوامی ترقیاتی اور ہنگامی امداد کی انجمنوں کے ساتھ انفارمیشن ٹیکنالوجی رابطوں کی صلاحیت کو بہتر بنانے میں مہارت رکھتا ہے۔ نیٹ ہوپ کے لیے جناب ایلن کے عطیات ایک کنیکٹیوٹی ایکسلریٹر فنڈ(CAF) کے قیام میں مدد دیں گے تاکہ 45 مقامات پر موجودہ رابطوں کو بڑھایا جا سکے؛ مزید 30 مقامات پر رابطوں میں مدد دینے کے لیے 10 ویری اسمال اپرچر ٹرمینل سیٹلائٹس (VSAT) کی فراہمی؛ مختلف مختصر مدتی نجی شعبے کے منصوبوں میں سرمایہ کاری کے ذریعے موبائل گنجائش کو بڑھایا؛ اور موبائل نیٹ ورک چلانے والوں کو شامل کرکے موجودہ موبائل نیٹ ورکس میں نئی گنجائش پیدا کی جا سکے۔

حوصلہ بڑھاتی باتیں:

جناب ایلن نے کہا کہ “ہمیں ایبولا بحران سے نمٹنے کے لیے قابل بھروسہ اعدادوشمار کی ضرورت ہے تاکہ جان سکیں کہ متاثرہ علاقوں میں کیا ہو رہا ہے۔ نیٹ ہوپ اقوام متحدہ اور تمام بڑے اداروں کے ساتھ مل کر کام کررہا ہے کہ وہ رابطوں میں کمی خامی کو شناخت کرے۔ آج ہم مغربی افریقہ میں ایبولا سے موثر انداز میں لڑنے کے لیے رابطوں اور ڈیٹا جمع کرنے کی صلاحیتوں کو بہتر بنانے کے لیے وسائل جمع کررہے ہیں۔”

“پال ایلن کی سرمایہ کاری علاقے میں رابطوں اور ڈیٹا جمع کرنے کی صلاحیتوں کو بہتر بنارہی ہے اور یہ مشکل ترین مقامات میں امدادی کارکنوں اور رضاکاروں کو فائدہ پہنچائے گی۔” لورووڈمین، سی ای او نیٹ ہوپ نے کہا۔ “ایبولا کا پھوٹ پڑنا ایک پیچیدہ ہنگامی صورتحال ہے اور جناب ایلن بروقت اعدادوشمار اکٹھے کرنے اور بحران کے کثیر الجہتی چیلنجز سے نمٹنے کے لیے ان اعدادوشمار کی بنیاد پر فیصلے کا واضح نظریہ اور ادراک رکھتے ہیں۔”

جناب ایلن کی اب تک کی

وباء پھوٹ پڑنے کے ابتدائی دنوں سے ہی جناب ایلن اور پال جی ایلن فیملی فاؤنڈیشن کی توجہ ایسے تزویراتی حلوں کی تلاش، ان میں سرمایہ کاری اور تعاون پر مرکوز تھی جو متاثرہ افراد کی اہم ترین ضروریات کو پورا کریں۔ جناب ایلن نے انفرادی شخصیات کے لیے مخصوص اداروں اور اہم ضروریات کو پورا کرنے میں آسانی پیدا کرنے کے لیے TackleEbola.com بھی تخلیق کر رکھی ہے۔

مزید معلومات اور جناب ایلن کے حصے کی مکمل فہرست کے بارے میں جاننے کے لیے www.tackleebola.comملاحظہ کیجیے اور ٹوئٹر یا فیس بک پر @TackleEbola اور @PaulGAllen کو فالو کیجیے۔

روابط برائے ذرائع ابلاغ:
ایلکسا روڈن
ولکان انکارپوریٹڈ
1-206-342-2230+
alexar@vulcan.com

 ڈیٹا لینگ کیک
برسون-مارت سیلر
1-415-994-4008+
dana.lengkeek@bm.com

سندھ پیرامیڈیکل اسٹاف کی جام مہتاب ڈہر کوصحت کی وزارت سنبھالنے پر مبارک باد

کراچی:سندھ پیرامیڈیکل اسٹاف ویلفیئر ایسوسی ایشن کی مرکزی کابینہ کا اجلاس سول اسپتال کراچی میں ہوا۔ اجلاس میں مرکزی صدر اخلاق احمد خان ،مرکزی سیکرٹری جنرل سیداسلام الدین شاہ،چیئرمین مرزا جاوید بیگ سیمت دیگر مرکزی و صوبائی عہدیداران اور اراکین نے شرکت کی۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے اخلاق احمد نے کہا کہ پیرا میڈیکل اسٹاف کے جائز مسائل تاحال حل طلب ہیں اخلاق احمد خان نے جام مہتاب ڈہرکو صوبائی وزیر صحت کا قلم دان سنبھالنے پر مبا رک باد پیش کی ، اور امید ظاہر کی کہ پیرامیڈیکل اسٹاف کے تمام مسائل کے حل کے لیے جلد عملی اقدامات اٹھائے جائیں گے خاص طور سے پیرامیڈیکل اسٹاف کے یتیم بچوں کو جلد ازجلد سرکار ی نوکریاں فراہم کی جائیں گی۔

پال جی ایلن نے ایبولا کے نتیجے میں یتیم ہونے والے بچوں کی حالت سے نمٹنے کے عہد کے ساتھ ایبولا کے خلاف جدوجہد کو وسیع کردیا

– سیو دی چلڈرن کے لیے سب سے بڑی نجی گرانٹ لائبیریا میں یتیم بچوں کو فوری دیکھ بھال فراہم کرے گی؛ تحفہ ایبولا بحران کے خلاف جنگ کے لیے 100 ملین ڈالر کے عہد کا حصہ ہے

سیاٹل، 13 نومبر 2014ء/پی آرنیوزوائر/ایشیانیٹ باکستان — انسان دوست شخصیت پال جی ایلن نے لائبیریا میں ایبولا بحران کے ہیبت ناک نتائج میں سے ایک،  وائرس سے یتیم ہونے والے بچوں کی دیکھ بھال، کے لیے کئی ملین ڈالر کی گرانٹ کا اعلان کیا ہے۔ یونیسیف کے مطابق رواں سال اب تک گنی، لائبیریا اور سیرالیون میں کم از کم 3,700 بچے اپنے والدین میں سے کسی ایک کو کھو چکے ہیں۔ اس یتیم بچوں کو درپیش چیلنجز ان نوعمر افراد کی زندگیوں پر کئی دہائیوں تک اثرات مرتب کریں گے۔

جناب ایلن لائبیریا کے بچوں کو صحت، آرام اور تعلیم کی فراہمی کے لیے سیو دی چلڈرن کی کوششوں میں مدد کے لیے 6.6ملین ڈالر کا عہد کررہے ہیں۔ سرمائے کی یہ فراہمی مقامی برادری میں شعور اجاگر کرنے کے منصوبوں کا بھی احاطہ کرے گی جس کا مقصد وائرس کو مزید پھیلنے سے روکنا ہے۔ گرانٹ پال جی ایلن کی ایبولا بحران سے نمٹنے کے منصوبوں میں کم از کم 100 ملین ڈالر کا سرمایہ دینے کے عہد کا حصہ ہے۔ جناب ایلن کی گرانٹ ایبولا سے نمٹنے کے لیے اب تک سیو دی چلڈرن کو وصول ہونے والا سب سے بڑا نجی عطیہ ہے۔

مغربی افریقہ میں سیو دی چلڈرن کے کام کی وڈیو اور تصاویر دیکھنے کے لیے ملاحظہ کیجیے: http://www.tackleebola.com/toolkit-save-the-children.html۔

بچے خاندان کے اراکین کی جدائی اور ان سے بچھڑنے کا سامنا کررہے ہیں، اسی شرح کے ساتھ جس سے ان کے والدین علاج کے لیے داخل ہو رہے ہیں۔ کئی اپنے گھروں  تک محدود ہیں؛ جبکہ وائرس سے بچ جانے والے دیگر بچے اپنی ملکیت یا گھر سے محروم ہوگئے ہیں۔ ایبولا بحران کے یہ نوعمر شکار بسا اوقات تنہا رہ جاتے ہیں یا برادری سے نکال دیے جاتے ہیں جو ان کے حوالے سے بیماری کے خوف سے مبتلا ہوتی ہے۔

سیو دی چلڈرن 20 سے زیادہ سالوں سے مغربی افریقہ میں مضبوط پروگرام موجودگی رکھتی ہے۔ انہوں نے لائبیریا میں ایبولا کے پھوٹتے ہی فوری ردعمل دکھاتے ہوئے اپنا کام شروع کردیا تھا۔ جناب ایلن کی گرانٹ لائبیریا میں مندرجہ ذیل اقدامات کو آگے بڑھائے گی:

  • ایبولا کے اثرات سہنے والے زد پذیر بچوں کا تحفظ: جناب ایلن کی مدد ایبولا کے اثرات سہنے والے بچوں کو بے حرمتی، استحصال، تشدد اور غفلت سے بچانے میں مدد دے گی۔ ان یتیموں کو نفسیاتی اور فرد و معاشرے کے روابط سے پڑنے والے اثرات کا علاج پیش کیا جائے گا، اور خاندان کی تلاش اور دوبارہ ملانے کی خدمات بھی پیش کی جائیں گی۔ بچوں کی بہبود کو یقینی بنانے کے لیے بعد میں بھی ان پر نظر رکھی جائے گی۔
  • ہنگامی تعلیمی منصوبوں کا نفاذ: یونیسیف کے مطابق ایبولا کی وجہ سے بند ہونے والے اسکولوں نے اسکول جانے کے قابل تقریباً ایک ملین بچوں کو باضابطہ تعلیم سے دور کردیا ہے۔ سیو دی چلڈرن ہنگامی تعلیمی پروگرام شروع کرے گی اور اپنے آزمودہ علمی اور حسابی تعلیمی منصوبوں کو اختیار کرکے بچوں کی تعلیم میں مقامی آبادیوں کو مدد دے گی۔ یہ منصوبے اسکولوں کو دوبارہ کھولنے اور طویل المیعاد اثر کو یقینی بنانے کے لیے کام جاری رکھیں گی۔ ساتھ ساتھ ریڈیو کے ذریعے تعلیمی پروگرامنگ بھی  طالب علموں کے لیے اسکول بند ہونے کے دوران سیکھنا ممکن  بنائے گی۔ گھریلو تعلیم کا منصوبہ وائرس سے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے نفسیاتی مدد اور حفظان صحت کے حوالے سے پیغامات فراہم کرے گا۔
  • ایبولا کمیونٹی کیئر مراکز کا سہارا: سیو دی چلڈرن “مقامی برادریوں کو قریب تر” دیکھ بھال فراہم کرنے کے لیے ایبولا کمیونٹی کیئر مراکز تعمیر کررہی اور چلا رہی ہے۔ وہ متاثرہ آبادیوں میں موجودہ جگہوں کو ایسی تنصیبات میں تبدیل کرے گا جو مشتبہ، ممکنہ اور یقینی ایبولا مریضوں کو جدا کرنے اور ان کا مشاہدہ کرنے اور انہیں خدمات فراہم کرنے کے لیے استعمال ہوں گی۔ یہ مراکز سے توقع ہے کہ یہ آلات اور رسد کی صورت میں ضروری مدد کی فراہمی، اور اضافی مراکز کی تعمیر، انتظام اور انہیں چلانے کے ذریعے ایبولا علاج کے یونٹوں پر بوجھ کو کم کریں گے۔ پہلا مراکز اس ہفتے لائبیریا میں شروع ہوگا جبکہ اگلے دو ماہ میں کل دس مراکز کھلیں گے۔
  • مقامی آبادی میں شعور اجاگر کرنے کی اضافی سرگرمیاں: موثر رابطہ ایبولا کو روکنے کے لیے اہم ہے۔ جناب ایلن کا عطیہ لائبیریا کی مقامی آبادی میں شعور اجاگر کرنے اور حساسیت کی سرگرمیوں کو بڑھانے میں مدد دے گا۔ یہ ایبولا علاج کے یونٹوں اور ایبولا دیکھ بھال کے مراکز کے قریب ذرائع ابلاغ کی شمولیت کا فطری نتیجہ ہوگا۔ مزید برآں سیو دی چلڈرن لائبیریا کی وزارت صحت اور وزارت تعلیم کے ساتھ مل کر بدستور کھلے ہوئے اسکولوں میں ایبولا سے تحفظ کے مواد کی دستیابی یقینی بنانے کے لیے کام کرے گی۔

عالمی ادارۂ صحت (ڈبلیو ایچ او) کے مطابق لائبیریا موجودہ ایبولا وباء سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والا ملک ہے۔ ڈبلیو ایچ او بتاتا ہے کہ 5 نومبر 2014ء تک لائبیریا میں ایبولا کے 6,525 یقینی، ممکنہ یا مشتبہ مریض موجود ہیں اور وائرس کے ذریعے 2,697 اموات ہوچکی ہیں۔

حوصلہ بڑھاتی باتیں:

جناب ایلن نے کہا کہ ” اگر ہم نے درست اقدامات نہیں اٹھائے تو ایبولا کا طویل المیعاد اثر بہت شدید ہوگا ۔ ہمیں لازمی ایسے حلوں پر توجہ رکھنا ہوگی جو مغربی افریقہ کے عوام کی دیرپا مدد کے لیے مستقل ڈھانچہ تعمیر کریں۔ اس آبادی میں بچے سب سے زیادہ زد پر ہیں اور سیو دی چلڈرن جو کام کررہا ہے وہ انتہائی دیکھ بھال اور تعلیم فراہم کرے گا اور بحران کے ان نو عمر شکاروں کے صحت مند مستقبل کو یقینی بنائے گا۔”

سیو دی چلڈرن کی صدر اور سی ای او کیرولن مائلز نے کہا کہ “اپنے حالیہ لائبیریا کے دورے میں میں نے بچوں، خاندانوں اور مقامی آبادیوں پر مہلک ایبولا وائرس کے اثر کو براہ راست دیکھا ہے۔ یتیموں کی تعداد میں روز بروز اضافہ خاص طور پر خطرناک ہے۔ جناب ایلن سے ملنے والی مدد سیو دی چلڈرن کے لیے یقینی بنائے گی کہ وہ زیادہ سے زیادہ ایسے مریضوں کو فوری طور پر دیکھ بھال فراہم کرےجنہیں اس کی سخت ضرورت ہے، اور ان دردناک نقصان سے بچانے میں مدد دی جائے جس کا کئی خاندان سامنا کررہے ہیں۔

جناب ایلن کی اب تک کی امداد:

وباء پھوٹنے کے ابتدائی دنوں سے جناب ایلن اور پال جی ایلن فیملی فاؤنڈیشن کی توجہ ایسے تزویراتی حلوں کی تلاش، انہیں سرمائے کی فراہمی اور ان کے ساتھ تعاون پر مرکوز تھیں جو متاثرہ افراد کے لیے سب سے اہم ضروریات کو پورا کرسکیں۔ جناب ایلن نے TackleEbola.comبھی تخلیق کی تاکہ انفرادی شخصیات کو مخصوص اداروں اور اہم ضروریات کو پورا کرنے کے لیے امداد آسان راستہ فراہم کریں۔

مزید معلومات اور جناب ایلن کی امداد کی مکمل فہرست کے لیے www.tackleebola.comملاحظہ کریں اور ٹوئٹر اور فیس بک پر @TackleEbola اور @PaulGAllen کو فالو کریں۔

 روابط برائے ذرائع ابلاغ:
الیکسا روڈین
ولکان انکارپوریٹڈ
1-206-342-2230+
alexar@vulcan.com

 ڈینا لینگ کیک
بورسن-مارستیلر
1-415-994-4008+
dana.lengkeek@bm.com

 وینڈی کرسچن
سیو دی چلڈرن
1-203-465-8010+
wchristian@savechildren.org

 فل کیرول
سیو دی چلڈرن
1-267-992-6356+
pcarroll@savechildren.org

The post پال جی ایلن نے ایبولا کے نتیجے میں یتیم ہونے والے بچوں کی حالت سے نمٹنے کے عہد کے ساتھ ایبولا کے خلاف جدوجہد کو وسیع کردیا appeared first on AsiaNet-Pakistan.

گھانا ایبولا وائرس کے خوف سے افریقی نیشنز کپ کی میزبانی سے دست بردار

آکرا:گھانا نے ایبولا وائرس کے باعث افریقا نیشنز کپ 2015کی میزبانی سے دست بردار ی کا اعلان کردیا۔ گھانا کی وزار ت کھیل ونوجوانان نے اعلان کیا کہ صحت کے حکام کی جانب سے خدشات کے اظہار کے بعدگھانا فٹ بال ایسوسی ایشن کے صدر کو آگاہ کیا گیا ہے کہ ہم افریقن نیشنز کپ کی میزبانی کرنے کی حالت میں نہیں ہیں۔کنفیڈریشن آف افریقن فٹ بال کی جانب سے گھا نا کوفیصلے پر نظر ثانی کے لیے خط لکھاگیا۔ دوسری جانب مراکش نے ٹورنامنٹ کی میزبانی کی بولی حاصل کرنے کے بعد ایبولا وائر س کی وجہ سے میزبانی کرنے سے معذوری ظاہر کرتھی،شمالی افریقی ممالک نے تجویز دی ہے کہ ٹورنامنٹ کو ایبولا وائر کے شدید حملے میں کمی آنے تک ملتوی کیا جائے۔

پال جی ایلن نے ایبولا متاثرہ مغربی افریقہ میں فوری ضروریات کو پورا کرنے کے لیے نئی انسانی امداد کا اعلان کردیا

– امداد اہم بنیادی ضروریات اور لازمی بنیادی ڈھانچہ فراہم کرے گی؛ ایکشن اگینسٹ ہنگر، امریکیئرز اور ڈائریکٹ ریلیف ایلن کے 100 ملین ڈالرز کا حصہ وصول کریں گی

سیاٹل، 6 نومبر 2014ء/پی آرنیوزوائر/ ایشیانیٹ پاکستان — انسان دوست شخصیت پال جی ایلن نے آج مغربی افریقہ میں ایبولا کی وبا پھیلنے سے خطرے سے دوچار ہونے والوں کی بنیادی انسانی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے فوری انسانی امداد فراہم کرنے کے لیے نئی گرانٹس کا اعلان کیا ہے۔ آج سے شروع ہونے والی یہ امداد امدادی انجمنوں کو ایبولا سے متاثرہ علاقوں میں خوراک، رسد اور بچاؤ کٹ فراہم کرنا ممکن بنائے گی۔

گزشتہ مہینے جناب ایلن نے اعلان کیا تھا کہ وہ ایبولا کے خلاف جنگ کے لیے اپنی وابستگی کو کم از کم 100 ملین ڈالرز تک بڑھا رہے ہیں۔ اس تازہ ترین امداد کے ذریعے، جناب ایلن کے وعدہ کردہ 100 ملین ڈالرز کا نصف سے بھی زیادہ حصہ اب ایبولا سے بچاؤ، اسے روکنے، علاج اور نمٹنے سے وابستہ منصوبوں کے لیے وقف ہوچکا ہے۔

انسانی کوششوں سے جناب ایلن کے نئے عہد میں شامل ہیں:

  • ایکشن اگینسٹ ہنگر کے لیے 1.9 ملین ڈالرز کی امداد، تاکہ وہ تنہا مریضوں کو خوراک فراہم کرے، پانی کی سبیلیں اور ہاتھ دھونے کے مقامات بنائے، ایبولا سے تحفظ کے بارے میں آگہی کو بہتر بنائے اور مقامی آبادی میں صحت کے کارکنوں کی تربیت کرے۔ اس امداد کے خصوصی نتائج میں سیرالیون میں خطرے سے دوچار برادریوں میں 20 پانی کی سبیلیں لگانا؛ لائبیریا میں 60 مقامی آبادیوں میں ہاتھ دھونے کی بیسنیں، صابن اور کلورین فراہم کرنا؛ اور لائیبیریا کی 80 برادریوں اور 60 اداروں میں معلومات کی فراہمی اور رابطے کی 1600  چیزیں پیش کرنا شامل ہیں۔
  • امریکیئرز کے لیے 1.35 کی گرانٹ کہ وہ لائبیریا کی گرانڈ باسا کاؤنٹی میں صحت کے مقامی نظام کو بہتر بنانے کے لیے کم وسائل کے حامل کلینکس کو اضافی رسد اور خدمات فراہم کرے۔ خاص طور پر یہ گرانٹ شدید متاثرہ علاقوں میں ذاتی تحفظ کے سامان کی فراہمی کی اجازت دے گی، ساتھ ساتھ مقامی کلینکس اور صحت کے مراکز کے درمیان بہتر رابطے اور صحت کے مقامی کارکنوں کے لیے ایبولا کی تربیت اور صلاحیتوں میں اضافے کو بھی ممکن بنائے گی۔ یہ کام گرانڈ باسا کے مرکز کو ایبولا علاج کے یونٹوں اور کاؤنٹی کے صحت کے نظام کو چار پڑوسی کاؤنٹیوں میں دہرانے اور اسی طریقے سے تکنیکی امداد فراہم کرنے کی اجازت دے گا۔
  • ڈائریکٹ ریلیف کے لیے 1 ملین ڈالرز کی امداد، تاکہ وہ ایبولا سے متاثرہ مغربی افریقی اقوام میں میں طبی رسد کی اپنی فراہمی کو جاری رکھ سکے اور میدان عمل میں نقل و حمل میں مدد دے۔ اب تک ڈائریکٹ ریلیف فضائی و بحری راستوں سے 140 ٹن کا طبی سامان فراہم کرچکی ہے۔

جناب ایلن کی مدد ادویات،بچاؤ رسد اور ذاتی تحفظ کے سامان کی فراہمی کے ذریعے میدان میں موجود طبی ماہرین کے تحفظ کو یقینی بنائے گی، صحت عامہ کا سامان بنانے والوں سے طبی رسدکی افریقہ تک آمد کوذرائع نقل و  حمل فراہم کرے گی اور ایبولا کے پھیلاؤ کو محدود رکھنے کے لیے طبی رسد کی موثر تقسیم کو یقینی بنانے کے لیے اختتامی سروں پر ہم آہنگی سے حصولیابی اور رسد کی تقسیم کے نظام میں مدد دے گی۔ رسد چار ساتھی انجمنوں کو فراہم کی جائے گی جو لائبیریا اور سیرالیون میں 47 بنیادی صحت و ایبولا علاج کے مراکز چلا رہی ہیں۔ یہ رسد دونوں ممالک کے 500 دیہات میں صحت کے 800 مقامی کارکنوں کو مدد فراہم کریں گی اور انہیں اپنے روز مرہ کاموں کو مرض لگنے کے خوف سے بالاتر ہوکر محفوظ انداز میں کرنا ممکن بنائیں گی۔

اب تک جناب ایلن کے وعدہ کیے گئے 100 ملین ڈالرز کا نصف سے زیادہ ایبولا کے خلاف جنگ میں شامل ہوچکا ہے۔ اس امداد نے ممکن بنایا ہے:

  • مغربی افریقہ میں 60,000 حفاظتی کٹس کی فراہمی
  • مدد کے لیے 8,500 سے زیادہ افراد کی تربیت
  • تقریباً 200,000 پاؤنڈز کی رسد کی روانگی۔
  • تقریباً 250 صحت کے مراکز کی مدد۔
  • 2014ء کے اختتام تک ضروری آلات اور رسد کی فراہمی کے لیے طے شدہ بیس امدادی پروازیں۔
  • تین ہنگامی آپریشن تنصیبات زیر تعمیر اور اس میں عملہ رکھا جائے گا۔

حوصلہ بڑھاتی باتیں:

جناب ایلن نے کہا کہ “ایبولا کے اثرات اس سے متاثرہ افراد سے کہیں زیادہ بڑھ چکے ہیں۔ اس کا ذیلی اثر افراد کو بنیادی انسانی ضروریات سے محروم کرنا ہے۔ یہ امداد مغربی افریقہ کے عوام کو فوری طور پر وہ علاج اور رسد حاصل کرنا ممکن بنائے گی جو انہیں اس بحران سے نکالنے کے لیے ضروری ہے۔”

ایکشن اگینسٹ ہنگر کی سی ای او اینڈریا تامبورینی نے کہا کہ ”   ایکشن اگینسٹ ہنگر سیرالیون اور لائبیریا میں ایبولا کی روک تھام کے لیے صحت اور امدادی اداروں کے قریبی تعاون سے کام کررہی ہے۔ جناب ایلن کی مدد وائرس کے بارے میں مقامی آبادیوں میں شعور اجاگر کرنے، صحت کی تنصیبات میں پانی کی حالت کو بہتر بنانے، ایبولا کے مشتبہ مریض کو شناخت کرنے اور اسے صلاح دینے کے حوالے سے صحت کے مقامی کارکنوں کی تربیت، اور ردعمل دکھانے کی صلاحیت کو بنانے  کے کام کو جاری رکھے گی۔”

امریکیئرز صدر اور سی ای او مائیکل جی نائنہوئس نے کہا کہ “اس وباء کو روکنے کا بہترین طریقہ مغربی افریقہ میں صف اول میں موجود صحت کے کارکنوں کی مدد کرنا ہے اور جناب ایلن نے اس ضمن میں حقیقی قائدانہ کردار  ادا کیا۔ فاؤنڈیشن کی امریکیئرز کو دی گئی مدد صحت کی فراہمی میں دیرپا تبدیلی فراہم کرے گی اور مریضوں اور صحت کے کارکنوں کا اعتماد بحال کرے گی۔”

ڈائریکٹ ریلیف کے سی ای او تھامس ٹائف نے کہا کہ “لائبیریا اور سیرالیون سب کے لیے صحت کی ضروری خدمات برقرار رکھ کر ڈائریکٹ ریلیف کے طویل المیعاد شراکت دار ایبولا سے نمٹنے کے لیےبہادری سے کام کررہے ہیں۔ جناب ایلن کی یہ مدد ڈائریکٹ ریلیف کی باہمی کوششوں کے لیے ضروری ہے کہ جو بڑے پیمانے پر پھیلی ہوئی اور فوری ضروری کی اہم رسد کو پورا کرسکے جو وائرس سے متاثرہ افراد کو روکنے اور ان کا علاج کرنے کے لیے درکار ہیں – اور یہ صحت کے وسیع تر نظام پر اپنے اثرات مرتب کرے گی۔”

جناب ایلن کی اب تک کی امداد:

وباء پھوٹنے کے ابتدائی دنوں سے جناب ایلن اور پال جی ایلن فیملی فاؤنڈیشن کی توجہ ایسے تزویراتی حلوں کی تلاش، انہیں سرمائے کی فراہمی اور ان کے ساتھ تعاون پر مرکوز تھیں جو فوری طور پر میدان میں آسکیں اور اہم ترین ضروریات کو پورا کرسکیں۔ جناب ایلن نے TackleEbola.comبھی تخلیق کی تاکہ انفرادی شخصیات کو مخصوص اداروں اور اہم ضروریات کو پورا کرنے کے لیے امداد آسان راستہ فراہم کرے۔ اب تک جناب ایلن مندرجہ ذیل حلوں کے نفاذ میں مدد کا عہد کرچکے ہیں:

  • سیرالیون اور لائبیریا میں آلات، رضاکاروں اور تعلیمی مواد کو سرمایہ دینے کے لیے امریکی صلیب احمر کے ساتھ تعاون (اگست 2014ء)
  • گلوبل گونگ کے لیے مساوی گرانٹ، جو صرف چار دنوں میں 700 سے زیادہ عطیہ دینے والوں نے برابر کردی۔ دس گروپوں نے نکاسی کی رسد کی تقسیم، تربیتی سیشنوں کے انعقاد اور عوامی آگہی کے اعلانات کے لیے امداد حاصل کی۔ (اگست 2014ء)
  • لائبیریا میں 50,000 حفاظتی کٹس ہوائی ذریعے سے فراہمی کے لیے یونیسیف کے ساتھ تعاون۔ (ستمبر 2014ء)
  • انتہائی ضروری طبی حفاظتی سامان اور ادویات کی فراہمی کے لیے مستقل راستے (ایئر برج) کی تکمیل  کے لیے ایئرلنک کے ساتھ تعاون۔ (ستمبر 2014ء)
  • سب سے زیادہ متاثر ہونے والے ممالک گنی، لائبیریا اور سیرالیون میں سی ڈی سی ایمرجنسی آپریشنز مراکز کے قیام کے لیے سی ڈی سی فاؤنڈیشن کے لیے گرانٹ۔ یہ مراکز مرض اور مریضوں سے رابطے کے کھوج کے لیے بہتر ڈیٹا مینجمنٹ اور کمیونی کیشن سسٹمز کے ذریعے باقاعدہ ردعمل میں مدد دے رہےہیں، جو آخر میں مرض کی شناخت اور اسے پھیلنے سے روکنےمیں مدد دے گا۔ (ستمبر 2014ء)
  • لائبیریا میں ایم ٹی آئی کے عملے کے لیے ضروری بنیادی ڈھانچے، رہائش اور نقل و حمل کے ذرائع کی فراہمی میں مدد کے لیے میڈیکل ٹیمز انٹرنیشنل (ایم ٹی آئی) کو سرمائے کی فراہمی۔ (ستمبر 2014ء)
  • گنی، لائبیریا اور سیرالیون میں موجود ایبولا ایمرجنسی پروگراموں میں مدد فراہم کرنے والے ڈاکٹرز ودآؤٹ بارڈرز/میڈیسنز ساں فرنتیرز (ایم ایس ایف) کے ساتھ شراکت داری۔ (ستمبر 2014ء)
  • متاثرہ ممالک میں عوامی آگہی اور شعور کو بڑھانے، بحران کے خلاف ردعمل دکھانے میں حکومت کی مدد اور مقامی آبادیوں میں حفظان صحت کے بہتر اصول اپنانے کے حوالے سے تعلیم و رابطے کے پروگراموں میں مدد کے لیے بی بی سی میڈیا ایکشن کے لیے گرانٹ۔  (اکتوبر 2014ء)
  • ایبولا میڈیوک فنڈ کا قیام جو طبی عملی کے اخراج کو حدود میں رکھنے کے دو یونٹوں کی امداد و تعمیر جو طبی ماہرین کو محفوظ انداز میں مغربی افریقہ سے نکالنے کے لیے استعمال ہوں گے ۔ (اکتوبر 2014ء)
  • یونیورسٹی آف میساچوسٹس کے ساتھ شراکت داری تاکہ وہ لائبیریا میں امدادی کوششوں کے لیے تربیت، طبی کارکن اور لیبارٹری کےآلات فراہم کرنے میں مدد دے سکے۔ (اکتوبر 2014ء)

مزید معلومات کے لیے  www.tackleebola.comملاحظہ کیجیے اور ٹوئٹر اور فیس بک پر @TackleEbola اور @PaulGAllen کو فالو کیجیے۔

 روابط برائے ذرائع ابلاغ:

الیکسا روڈین
ولکان انکارپوریٹڈ
206-342-2230
alexar@vulcan.com

ڈینا لینگ کیک
بورسن-مارستیلر
415-994-4008
dana.lengkeek@bm.com