پاکستان میں ہیپاٹائٹس سی کے انفیکشن سے متاثرہ مریضوں کی تعداد دنیا میں سب سے زیادہ 

کراچی(پی پی آئی)پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن (پی ایم اے) نے ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) کیجاری کردہ حالیہ رپورٹ پر گہری تشویش کا اظہار کیاہے جس کے مطابق پاکستان میں ہیپاٹائٹس سی کے انفیکشن سے متاثرہ مریضوں کی تعداد دنیا میں سب سے زیادہ  ہےَ پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن  کے؁اعزازی سیکریٹری جنرل ڈاکٹر عبدالغفور شورو نے کہا ہے کہ یہ تشویشناک اعدادوشمار صحت عامہ کے اس بحران سے مؤثر طریقے سے نمٹنے کے لیے حکومت سے فوری کارروائی کا مطالبہ کرتے ہیں۔ کیونکہ ہیپاٹائٹس سی ایک وائرل انفیکشن ہے جو دنیا بھر میں لاکھوں لوگوں کو متاثر کرتا ہے، جس سے جگر کو شدید نقصان پہنچتا ہے اور صحت کی دیکھ بھال کے نظام پر بوجھ کا باعث ہے۔ پاکستان میں ہیپاٹائٹس سی کا موجودہ پھیلاؤ ناقابل قبول ہے اور اپنے شہریوں کی فلاح و بہبود کو یقینی بنانے کے لیے فوری  توجہ طلب ہے۔پی ایم اے حکومت پر زور دیتی ہے کہ وہ درج ذیل اقدامات کو ترجیح دے اور ان پر عمل درآمد کرے۔تیز رفتار آگاہی مہم:  حکومت کو ہیپاٹائٹس کی وجوہات، منتقلی کے طریقوں، روک تھام، اور دستیاب علاج کے بارے میں لوگوں کو آگاہ کرنے کے لیے ایک وسیع عوامی بیداری مہم شروع کرنی چاہیے اس مہم کو متعدد پلیٹ فارمز کا استعمال کرنا چاہیے، جیسے ٹیلی ویژن، ریڈیو، پرنٹ میڈیا، سوشل میڈیا، اور کمیونٹی آؤٹ ریچ پروگرام۔  اسکریننگ اور جانچ کو مضبوط بنانا:  حکومت کو پورے ملک میں آسان رسائی اور سستی اسکریننگ اور جانچ کی سہولیات قائم کرنی چاہئیں۔ بیماری کے مزید پھیلاؤ کو روکنے اور متاثرہ افراد کے بروقت علاج کو یقینی بنانے کے لیے فوری تشخیض بہت ضروری ہے۔ قابل رسائی اور سستا علاج:   یہ ضروری ہے کہ حکومت ہیپاٹائٹس سی کے علاج کے لیے ضروری اور سستی ادویات کی دستیابی کو یقینی بنائے۔ دوا ساز کمپنیوں کے ساتھ گفت و شنید کرکے اور سبسڈیز کو لاگو کرکے، حکومت تمام متاثرہ افراد کے لیے علاج کو قابل رسائی بنا سکتی ہے۔بہتر صحت کی دیکھ بھال کا بنیادی ڈھانچہ:   صحت کی دیکھ بھال کے بنیادی ڈھانچے اور سہولیات میں سرمایہ کاری، خاص طور پر دیہی علاقوں میں، بہت ضروری ہے۔ اس سے ہیپاٹائٹس سی کے مریضوں کی مناسب تشخیص، علاج، اور مسلسل نگہداشت کو یقینی بنایا جاسکتا ہے جس سے بیماری کے پھیلاؤ کو کنٹرول کرنے میں مدد ملے گی۔  انجیکشن کامحفوظ استعمال:   انفیکشن کنٹرول کے اقدامات کا سختی سے نفاذ، بشمول صحت کی دیکھ بھال کی سہولیات میں انجیکشن کے محفوظ استعمال کو ترجیح دینی چاہیے۔ طبی آلات کی مناسب جراثیم کشی اور ڈسپوزایبل سرنجوں کے استعمال کو فروغ دینے سے نئے انفیکشن کا خطرہ نمایاں طور پر کم ہو جائے گا۔تحقیق کے لیے معاونت: حکومت کو ہیپاٹائٹس سی کی روک تھام، علاج اور خاتمے پر توجہ مرکوز کرنے والے تحقیقی اقدامات کی فعال طور پر حمایت اور حوصلہ افزائی کرنی چاہیے۔ تحقیق میں سرمایہ کاری بہتر حکمت عملیوں، صحت کی دیکھ بھال کے بہتر طریقوں اور بالآخر اس بیماری  کے خاتمے کا باعث بنے گیپی ایم اے اس فوری مسئلے سے نمٹنے کے لیے حکومت، بین الاقوامی تنظیموں اور تمام اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ تعاون کے لیے تیار ہے۔ ہم پاکستان سے ہیپاٹائٹس سی کے خاتمے کے لیے ایک جامع قومی حکمت عملی، پیش رفت کی باقاعدہ نگرانی، اور اقدامات کے موثر نفاذ کی ضرورت پر زور دیتے ہیں۔

Latest from Blog