صحت کی دیکھ بھال کی ضروری مصنوعات کو ٹیکس سے مستثنیٰ کردیاجائے،ایچ ڈی اے پی  چیئرمین

 کراچی(پی پی آئی)ہیلتھ کیئر ڈیوائسز ایسوسی ایشن آف پاکستان (ایچ ڈی اے پی) نے بدھ کے روز ضروری صحت کی دیکھ بھال کی مصنوعات پر 25 سے 30 فیصد سیلز ٹیکس کے نفاذ پر گہری تشویش کا اظہار کیا ہے۔ایک بیان میں ایچ ڈی اے پی کے چیئرمین مسعود احمد نے کہا کہ صحت کی دیکھ بھال کی ضروری مصنوعات پر اس بھاری سیلز ٹیکس کا نفاذ ہمارے ہیلتھ کیئر سسٹم کے لیے ایک تباہ کن دھچکا ہے۔ اس سے لاکھوں پاکستانیوں، خاص طور پر کم آمدنی والے خاندانوں کے لیے اہم طبی علاج ناقابل برداشت ہونے کا خطرہ ہے۔انہوں نے کہا کے  پالیسی میں تبدیلی غیر متناسب طور پر کمزور آبادیوں کو متاثر کرے گی جو زندہ رہنے کے لیے سستی صحت کی دیکھ بھال پر انحصار کرتے ہیں۔ خیراتی ہسپتال، جو پہلے ہی سخت بجٹ پر کام کر رہے ہیں، اب اخراجات میں کم از کم 30 فیصد اضافے کا سامنا کر رہے ہیں۔مسٹر احمد نے کہا کہ کینسر، ہیپاٹائٹس اور دل کی بیماریوں کے لیے ضروری تشخیصی ٹیسٹ اور علاج کی قیمتیں پہلے ہی آسمان کو چھو رہی تھیں، جو پاکستانیوں کی اکثریت کے لیے ناقابل برداشت ہیں۔  درمیانی اور کم آمدنی والے خاندانوں کو صحت کی دیکھ بھال کے بڑھتے ہوئے اخراجات، ممکنہ طور پر ضروری علاج میں تاخیر یا آگے بڑھنے کا نقصان برداشت کرنا پڑے گا، جس سے صحت کے مسائل بڑھ جائیں گے اور طویل مدتی اخراجات بڑھیں گے۔

Latest from Blog