ہتک عزت قانون، تین دفعات پر عملدرآمدعدالتی فیصلے سے مشروط

لاہور (پی پی آئی)لاہور ہائیکورٹ نے پنجاب میں حال ہی میں بطور قانون نافذ ہونے والے ہتک عزت قانون کی تین دفعات پر عملدرآمد کو عدالتی فیصلے سے مشروط کر دیا۔لاہور ہائیکورٹ میں پنجاب میں ہتک عزت قانون کے خلاف دائر درخواست پر سماعت ہوئی۔جسٹس امجد رفیق نے استفسار کیا ہتک عزت قانون کیسے آزادی اظہار رائے  اوربنیادی حقوق کے خلاف ہے؟ جس پر وکیل درخواست گزار نے بتایا کہ ہتک عزت قانون کے مطابق آپ بغیر ثبوت کارروائی کر سکتے ہیں۔جسٹس امجد رفیق نے کہا چیف منسٹر کوئی بیان دے تو آپ اس کو عدالت لے آئیں یہ غلط بات ہے، جس پر وکیل درخواست گزار نے کہا وزیراعلیٰ جھوٹ ہی نہ بولے۔وکیل درخواست گزار کا کہنا تھا وزیر اطلاعات پنجاب صبح سے لے کر شام تک جھوٹ بولتی ہیں، اس قانون میں ٹرائل سے قبل ہی ملزم کو 30 لاکھ جرمانہ ہو سکتا ہے۔لاہور ہائیکورٹ نے ہتک عزت قانون کی دفعہ 3، 5 اور 8 پر عملدرآمدکو فیصلے سے مشروط کرتے ہوئے اٹارنی جنرل اور ایڈووکیٹ جنرل پنجاب کو  معاونت کے لیے نوٹس جاری کر دیے۔ عدالت نے پنجاب حکومت سمیت دیگرسے بھی جواب طلب کر لیا۔یاد رہے کہ پنجاب اسمبلی سے منظور بل پر قائم مقام گورنر پنجاب ملک احمد خان نے دستخط کیے تھے جس کے بعد ہتک عزت کا قانون پنجاب میں باقاعدہ طور پر لاگو ہو چکا ہے۔

Latest from Blog